WELL ONE DO NOT KNOW WHETHER THE WOMAN WAS IN HER SENSES OR THE CLERIC MOTIVATED HER AND DID SHE REALLY BURNT A QORA’AN , EVEN IF SHE DID NOTHING GOES OF ALLAH OR MUSLIMS BUT THAT PLACE IS A WEIRED PLACE & SO MUCH FOUL IS HAPPENING THERE ALL THE TIME, ISLAM HAS NOTHING TO DO WITH IT .

BUT THE EVENT REMINDS AN INCIDENT 1400 YEARS BACK WHEN THE RULER OF THE TIME ORDERED COLLECTION OF ALL THE MANUSCRIPTS , SO PAINSTAKINGLY SCRIBED BY SAHABAS OF THE PROPHET (saawaws) GOT IT BURNT SAVE THE COMPILATION OF HIS OWN AND A WAST MAJORITY STILL CONSIDER THE QORA’AN BURNER AS THEIR KHALIFAH OF THE MUSALMAANS . NO KILLING NO LYNCHING THEN , HOWEVER HE WAS SOMETIMES LATER BRUTALLY GHERAOED AND KILLED , NOT FOR THAT REASON.. THIS IS A FACT OF HISTORY AND IT HAPPENED WHICH IS FOLLOWED BY HIS BILLIONS OF  FOLLOWERS TILL TODAY AND THEY CALL THEMSELVES  MUSLIM . ARE THEY ?

IF WE MUSLIM ACCIDENTLY DROP THIS HOLY BOOK , IT IS MANDATORY FOR US TO LIFT IT WITH RESPECT REVERENTLY, KISS IT AND PUT IT IN ITS COVER AND THERE IS CERTAIN AMOUNT OF KAFFARAH TO BE PAID IN CHARITY .

 
 David R. Pressler <presslerfamily@hotmail.com> wrote:
below is from the BBC, not exactly a lover of Israel…
                 ٢٩ شوال ظهور پر نور محسن اسلام سرکار ابو طالب ع تمام مومنين کو مبارک هو
THIS IS A GREAT EID E MAULOOD E MOHSIN E INSANIYAT ON THE 29TH OF SHAWWAL WHICH MARKS  THE  BIRTH ANNIVERSARY , THE  FIRST ADULT WHO ACCEPTED THE MESSAGE OF ISLAM FROM HIS HEART AND TOOK CARE OF THE YOUNG MOHAMMAD (saawaws) IN HIS LAPS, RAISED HIM MOST RELIGIOUSLY AND  PUTTING HIS SON TO SHADOW HIM DAY & NIGHT SO THAT NO HARM COULD REACH THE HOLY PROPHET (s).
INTUTION MUST HAVE TOLD HIM THAT HE IS GOING TO BE DECLARED THE RASOOL , WHICH IS VERY APPARENT FROM THE FOLLOWING EVENT WHICH HAPPENED 30 YRS
BEFORE FORMAL DECRATION OF HIS NABOOWAT .
HAZRAT ABU TALIB (a s) WAS THE CARETAKER OF THE HOLY KAABAH AND HAD THE GREATEST REPUTITION OF THE SAVIOR OF HUMANITY . IT HAPPENED THAT THERE WAS A SEVERE DROUGHT & FAMINE IN MAKKAH AND PEOPLES WERE ON THE VERGE OF STARVING TO DIE . THEY CAME TO HAZRAT ABU TALIB (a s) FOR HELP. THEY KNEW THAT IF ANY ONE COULD DO SOMETHING IT WAS ONLY HAZRAT ABU TALIB (a s) THEY CAME IN DROVE & REQUESTED HIM TO DO SOMETHING . HAZRAT MOHAMMAD (saw) WAS NINE OR TEN YEARS OLD THEN . HE TOOK HIM ON HIS LAP , LEANED WITH THE WALL OF THE KAABAH , RAISED HIS HANDS AND SAID ” YA  ALLAH , WITH THE KIND VASEELAH OF THIS HOLY CHILD I PRAY TO YOU TO SEND RAINS ”. LO & BEHOLD , HIS PRAYERS WERE NOT  EVEN FINISHED , DARK CLOUDS APPEARED FROM THE HORIZON & AND IT RAINED SO HEAVILY THAT THE WHOLE AREA BECAME A POOL .
HOW PITY THAT THERE ARE SOME SO CALLED MUSLIMS  WHO THINK THAT HE NEVER ACCEPTED ISLAM , THE FACT IS HE IS AMONG ADULTS THE FIRST AND HIS SON AMONG THE FIRST CHILD AND AMONG THE WOMEN HAZRAT KHADIJAH (saa) WAS THE FIRST WHO WAS BROUGHT TO THE PROPHET (s) BY HIM ONLY & HE RECITED THEIR NIKAAH THIS IS THE STORY OF THE FIRST MUSLIM, THE SAVIOR OF ISLAM,WHOSE SON HAZRAT ALI (a s) WAS DIVINELY APPOINTED THE FIRST SUCCESSOR , KHALEEFAT AL MOMENIN
OF THE HOLY PROPHET (saawaws) .
IN REAL ISLAM POLYGAMY SHOULD HAVE BEEN ZERO .
THERE ARE TWO BASIC REQUIREMENTS .
IF A MAN WANTS TO  HAVE ANOTHER WIFE , HE HAS TO GET FULL WILLING CONCENT OF HIS EXISTING WIFE , OR HE SHOULD HAVE VALID REASONS TO GIVE DIVORCE
HE HAS TO BE ABSOLUTELY SURE THAT FOR THE REST OF HIS LIFE HE SHALL BE ABLE TO TREAT BOTH THE WIVES IN EQUAL TERMS IN EVERY RESPECT .
SINCE BOTH THE CONDITIONS ARE ABSOLUTELY TOUGH , ALMOST NEXT TO IMPOSSIBLE, THE  SECOND MARRIAGE COULD NEVER BY RIGHT IN ISLAM EXCEPT IN THE RAREST OF THE  RARE CASES .
THERE IS NO RELIGIOUS SANCTION OF TRIPLE TILAQ, HALALAH, MISYAR OR URFI .
THESE ARE ACTS OF ISLAMIC CRIMES AGAINST HUMANITY AND ARE BAD SOCIALLY TOO.
ALLAH HAS GIVEN EQUAL TERMS TO BOTH MEN AND WOMEN , IN CASE OF GENUINE, RELIGIOUSLY VALID REASONS A WOMAN CAN ALSO HAVE ANOTHER HUSBAND BY REMARRYING, THE MAN OF HER CHOICE AFTER GETTING DIVORCE FROM THE PREV-IOUS HUBAND AND WAITING FOR THE IDDAH PERIOD .
MAULA E KAENAAT HAZRAT ALI ALAIHISSALAM WAS APPOINTED WALI, WASI E RASOOL ALLAH WA KHALIFAH BILA  FASL , BY ALLAH , NOT  IBNE SABA , IF ANY MAN OF THIS NAME EVER EXISTED . 
 
EVERY MUSLIM SHOULD KNOW AND BELIEVE THAT THE NABIS, PROPHETS WHO ARE INFALLIBLE ARE CHOSEN AND APPOINTED BY ALLAH, NOT BY IJMA’A . THE MAN WHO  SUCCEEDS THEM ALSO HAS TO BE INFALLIBLE  OTHERWISE HE IS LIKELY TO MISGUIDE THE UMMAH , SO ALLAH SPECIFICALY COMMANDED THE HOLY PROPHET TO DECLARE & ”IF YOU DID NOT , YOU DID NOTHING” . HE SAID ”YOU SHOULD DO IT WITHOUT FEAR ”AND HE DID IN THE PRESENCE OF 120000 HAJJIS AT GHADIR KHUM .
 
OTHERWISE ALSO ALLAH SAYS ” INNI JAELUN FIL ARZ E KHALEEFAH” . ”I, ONLY APPOINT KHALIFAH ON THE EARTH”.
 
IT WAS THE GREEDY LUSTY MUNAFEQEEN AMONG THE SAHABAS , ABU BAKR UMAR USMAN WHO TURNED THEIR HEELS THE MOMENT THE HOLY PROPHET CLOSED HIS EYES AND CREATED THE FASSAD WHICH SPLITTED THE ISLAM IN THE EVIL DEVIATED MAJORITY AND THE MAINFRAME PIOUS ISLAM WHICH IS FOLLOWED BY THE FOLLOWERS OF IMMACULATE INFALLIBLE AHLEBAYT (a s)  
 
IBNE SABA MEANS NOTHING TO FOLLOWERS OF AHLEBAYT, HE IS SIMPLY THE CONCOCTED SHAITAAN CREATED BY SUNNI ZEALOTS WHOSE NAME NO ONE KNEW TILL THE TWO HUNDREDS YEARS BACK  THE SAUDI – YAHOODIS CREATED A NEW MAZHAB OF WAHABBISM & THIS MYTHICAL STORY OF IBNE SABA BECAME CURRENCY  .
IBNE SABA OWES NOTHING TO THE CREDIT OF ISLAMIC SHIA COMMUNITY BUT IS A BIG RELIEF TO THEIR INNOVATED , DEVIATED FAITH OF AHLE SUNNA WAL JAMA’Aجما’ع
AN EX WAHABI ACCEPTED TRUE ISLAM WHO USED TO SAY SHIA KAFIR SHIA KAAFIR AND THE SAME WAHABI FROM THE EX WAHABI CLARIC FAMILY HAS NOW BECOME A  SHIA PREACHER . WAHABBISM IS STILL PREACHED FROM HIS HOUSEHOLD BUT HE HAS COME OUT FROM SURE JAHANNUM & HAVE CONVERTED MANY . THIS IS THE TRUTH OF SHIA ISLAM, THE TRUE ISLAM

حافظ عمران علي
شیعہ کافر کہتے کہتے خود شیعہ ہوگیا
ضرور پڑھیں
حال ہی میں شیعہ مذہب قبول کرنے والے یمن کے نامور عالم دین (ڈاکٹر عصام العماد)
نے بتا دیا کہ انھوں نے کیسے ہدایت پائی….
ایک بار ضرور پڑھیں… !!
ڈاکٹر عصام العماد جو پہلے ایک نجدی عالم دین تھے نے اپنے ملک کی موجودہ صورت حال کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: اسلامی بیداری اور عربی ملکوں میں انقلابی تحریک سے پہلے تک، یمن وہابیوں کا ایک مستحکم مرکز تھا۔
جامعۃ المصطفیٰ (ص) العالمیہ کے اس استاد نے مزید کہا: یمن میں حوثیوں جن کا تعلق طباطبائی سادات سے ہے کے قیام سے آج اس ملک میں نجدی زوال کی طرف جا رہے ہیں اور شیعہ کثرت کے ساتھ پھیل رہے ہیں آج یمن میں شیعوں کی تعداد پہلے سے بہت زیادہ ہو چکی ہے۔
میرا گھر یمن میں ابھی بھی فرقہ وہابیت کی نشر و اشاعت کا مرکز ہے
یمن سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر عصام العماد نے مزید کہا: یمن میں زیدی اور اثناء عشری شیعوں نے مل کر قیام کیا اور اس ملک میں وہابیوں کے مقابلے میں ایک مضبوط قلعہ قائم کیا ہے۔
انہوں نے مزید کہا: یمن میں تیس لاکھ سے زیادہ آبادی ہے کہ جن میں تقریبا آدھے زیدی اور اثنی عشری شیعہ ہیں۔
اسلامی مفکر نے کہا: یمن کی سرحد سعودی عرب سے ملتی ہے یہی چیز باعث بنی ہے کہ گزشتہ کئی سالوں سے سعودی عرب سے وہابی علماء وہاں جا کر وہابیت کی تبلیغ کررہے ہیں۔ وہابیت آج عالم اسلام کی سب سے بڑی مشکل ہے۔
انہوں نے یمن میں اپنے گھر والوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: میرے والد کا گھر یمن میں ابھی بھی وہابیت کی ترویج کا مرکز بنا ہوا ہے اور بہت سارے لوگ اس گھر میں وہابی افکار سے آشنا ہوتے ہیں۔
عماد نے یاد دہانی کرائی کہ میں چھے سال کی عمر میں وہابیت کی کلاس میں حاضر ہونا شروع ہوا تھا اور کچھ ہی سالوں میں وہابیت سے آشنا ہو گیا تھا اور اس بات کی وجہ کہ کیوں وہابی، بچوں کو اپنے افکار سے آشنا کرتے ہیں یہ ہے کہ بچے جلدی باتوں کو قبول کر لیتے ہیں اور ان کے ذہن میں کوئی استدلال اور اعتراض نہیں آتا۔
مجھے خطبہ حضرت زھرا(س) نے شیعہ کیا
ڈاکٹر عماد نے اپنے شیعہ ہونے کے بارے میں بتایا: میں نے سعودی یونیورسٹیوں میں تعلیم مکمل کی آخر میں ایک سنی عالم دین جاھز کی کتاب پر تحقیق کرتے ہوئے جب میں ان کی ایک عبارت پر پہنچا جس سے میرے ذہن میں یہ سوال پیدا ہوا کہ کیوں پیغمبر اسلام (ص) کی رحلت کے بعد مسلمانوں نے رسول(ص) کی بیٹی کی حمایت نہیں کی؟
انہوں نے مزید کہا: حضرت زہرا (س) اپنا حق حاصل کرنے کے لیے حضرت علی (ع) اور امام حسن و حسین (ع) کو لے کر خلیفہ اول کے پاس گئیں لیکن خلیفہ اول نے ان کی گواہی قبول نہیں کی اس سلسلے میں جاھز نے بہت اچھا جواب دیا ہے۔
العماد نے جاھز کےجواب کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: جاھز کا کہنا ہے کہ جب خلیفہ دوم منبر رسول پر بیٹھ کر صحابیوں کے بھرے مجمع میں یہ اعلان کر سکتے ہیں کہ رسول کہتے تھے متعہ حلال ہے اور میں کہتا ہوں حرام ہے اور تمام صحابی مسجد میں بیٹھے خلیفہ دوم کی باتیں سن کر خاموش ہو جاتے ہیں تو ایسے افراد سے کیا توقع کی جا سکتی ہے کہ وہ بنت رسول(ص) کا حق غصب نہ کریں اور انہیں واپس لوٹا دیں۔
انہوں نے امام فخر الدین رازی کے کچھ جملوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: جب میں وہابی تھا یہ سوچتا تھا کہ یہ جو حضرت زہرا(س) نے کہا کہ میرے جنازے میں یہ دو لوگ شریک نہ ہوں تو اس میں قصور حضرت زہرا(س) کا تھا نہ کہ خلیفہ اول و دوم کا لیکن جب میں نے تحقیق کی تو اس کے برخلاف معلوم ہوا۔ میں اسی مسئلے کی تحقیق کر رہا تھا کہ امام فخر الدین رازی کی اس عبارت تک پہنچا جو میرے لیے بہت دلچسپ تھے ان کو پڑھ کر میں مطمئن ہو گیا کہ حضرت زہرا(س) حق پر تھیں، وہ عبارت یہ تھی: ’’قرآن کریم میں موجودہ ارث سے متعلق آیات اور رسول سے مروی احادیث میں وراثت چھوڑنے پر تاکید کی گئی ہے تو کیسے ممکن ہے کہ رسول اسلام(ص) خود فدک دوسروں کو بخش دیں اور اپنی بیٹی کو وراثت میں نہ دیں؟‘‘
حضرت زھرا(س) پر پڑے مصائب کو بیان کرنا میرا فریضہ ہے
عصام العماد نے مزید کہا: ایک مرتبہ ایک صحابی، رسول کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا کہ میں نے اپنا سارا مال راہ خدا میں وقف کر دیا ہے تو رسول ناراض ہو گئے اور کہا کہ تم صرف ایک تہائی حصے کو وقف کرنے کا حق رکھتے ہو ، اب کیسے ممکن ہے خود رسول اپنے بعد سارا مال بخش دیں اور اپنی اولاد کو کچھ نہ دیں؟
انہوں نے کہا کہ میں فخرالدین رازی کی یہ عبارت پڑھ کر حیران رہ گیا حضرت زھرا (س) کی مظلومیت کا احساس کیا۔ حضرت زھرا(س) کی مظلومیت میرے شیعہ ہونے کا باعث بنی اور میں نے اس چیز کو ایک مقالے’’ میرے شیعہ ہونے میں حضرت زھرا(س) کی مظلومیت کا کرار‘‘ کے عنوان سے بیان کیا ہے۔
عصام العماد نے کہا: اس کے بعد میں نے ایک سنی عالم دین کی لکھی ہوئی کتاب کا مطالعہ کیا جو انہوں نے شیعہ ہونے کے بعد لکھی تھی اور اس کا نام تھا ’’ بنور فاطمہ سلام اللہ علیہا اھتدیت‘‘ ( میں نے نور فاطمہ کے ذریعے ہدایت پائی) اس کتاب میں، میں حضرت زھرا (س) کے خطبے کو پڑھ کر شیعہ ہو گیا۔
انہوں نے مزید کہا: وہابیوں کے لیے بہت سخت ہے کہ وہ اس بات کو قبول کریں کہ حضرت زھرا (س) حق بجانب تھیں چونکہ اس بات سے خود ان پر اعتراض ہوتا ہے۔ اس وجہ سے میں نے یہ ٹھال لی ہے کہ شیعت کی حقانیت کو ثابت کرنے کے لیے خلیفہ اول و دوم کی طرف سے حضرت زہرا سلام اللہ علیہا پر ڈھائے گئے مظالم کو بیان کروں۔
واضح رہے کہ ڈاکٹر عصام العماد ایک وہابی عالم دین تھے جنہوں نے شیعہ مذہب کا مطالعہ کرنے کے بعد مذہب حقہ کو قبول کیا انہوں نے شیعہ ہونے سے پہلے ۱۷ سال ایک سنی سعودی عرب کی وہابی یونیورسٹی میں عالم حاصل کیا اور اس دوران شیعہ مذہب اور امام علی (ع) کے خلاف کتاب لکھی اور شیعہ ہونے کے بعد اپنی اس پہلی کتاب پر جواب لکھا۔
قابل ذکر ہے کہ ڈاکٹر العماد شیعہ ہونے کے بعد قم میں تعلیم و تدریس میں مشغول ہیں انہوں نے شیعہ شناسی، علم رجال اور حدیث و تاریخ میں مہارت حاصل کی۔ موصوف اس وقت جامعۃ المصطفیّٰ(ع) العالمیہ میں استاد کے عنوان سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔
عصام العماد چونکہ ایک طویل عرصے تک وہابی فرقے کے عالم دین تھے اور اس فرقے کی اصلیت سے بخوبی آشنا ہیں اس وجہ سے اب وہابیت کی حقیقت کو ظاہر کرنے میں کتابیں تالیف کر رہے ہیں۔
موصوف نے اپنے خاندان میں تبلیغ کے ذریعے پانچ افراد یعنی اپنے بھائی حسن العماد، تین بہنیں اور ایک بھانجے طہٰ الذاری کو شیعہ کر دیا ہے جو قم میں زیر تعلیم ہیں۔

LikeShow more reactions

Comment

Syria: Iran’s missile killed at least 50 Daesh terrorists  including several high-ranking commanders, were killed when one of Iran’s missiles hit their headquarters in Syria’s Dayr al-Zawr. Iran’s Islamic Revolution Guards Corps (IRGC) fired six medium-range ground-to-ground ballistic missiles at Daesh bases in Syria’s Dayr al-Zawr on Sunday in retaliation for twin terrorist attacks in the Iranian capital Tehran, which killed 17 people and injured over 50 others. According to reports, one of the missiles directly hit a Daesh command center in the city of al-Mayadin in Dayr al-Zawr. Six Libyan Daesh commanders were killed in the attack; two of whom have been identified as Abu Asim al-Libyai and Abdel Kader al-frani.

ALHAMDOLILLAH , SHUKR ALLAH , Daesh are being sent to hell every now  and  then, the process is slow but steady , primerly because of the caution on civilian population , other wise after the sure demise, however undeclared , of the KHALEEFA ABU BAKAR (sic) it was a matter of just only a few days .
However Evil never lasts for ever and soon there  will remain no one to call himself a DAESHI and they shall all be found only in the books of history . Let us all the peace loving people of the world or in other words the
true Muslims , the followers of  Ahlebayt e Rasool (s) pray for that grand Eid come sooner than later.