Archives for category: Uncategorized
AN EX WAHABI ACCEPTED TRUE ISLAM WHO USED TO SAY SHIA KAFIR SHIA KAAFIR AND THE SAME WAHABI FROM THE EX WAHABI CLARIC FAMILY HAS NOW BECOME A  SHIA PREACHER . WAHABBISM IS STILL PREACHED FROM HIS HOUSEHOLD BUT HE HAS COME OUT FROM SURE JAHANNUM & HAVE CONVERTED MANY . THIS IS THE TRUTH OF SHIA ISLAM, THE TRUE ISLAM

حافظ عمران علي
شیعہ کافر کہتے کہتے خود شیعہ ہوگیا
ضرور پڑھیں
حال ہی میں شیعہ مذہب قبول کرنے والے یمن کے نامور عالم دین (ڈاکٹر عصام العماد)
نے بتا دیا کہ انھوں نے کیسے ہدایت پائی….
ایک بار ضرور پڑھیں… !!
ڈاکٹر عصام العماد جو پہلے ایک نجدی عالم دین تھے نے اپنے ملک کی موجودہ صورت حال کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: اسلامی بیداری اور عربی ملکوں میں انقلابی تحریک سے پہلے تک، یمن وہابیوں کا ایک مستحکم مرکز تھا۔
جامعۃ المصطفیٰ (ص) العالمیہ کے اس استاد نے مزید کہا: یمن میں حوثیوں جن کا تعلق طباطبائی سادات سے ہے کے قیام سے آج اس ملک میں نجدی زوال کی طرف جا رہے ہیں اور شیعہ کثرت کے ساتھ پھیل رہے ہیں آج یمن میں شیعوں کی تعداد پہلے سے بہت زیادہ ہو چکی ہے۔
میرا گھر یمن میں ابھی بھی فرقہ وہابیت کی نشر و اشاعت کا مرکز ہے
یمن سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر عصام العماد نے مزید کہا: یمن میں زیدی اور اثناء عشری شیعوں نے مل کر قیام کیا اور اس ملک میں وہابیوں کے مقابلے میں ایک مضبوط قلعہ قائم کیا ہے۔
انہوں نے مزید کہا: یمن میں تیس لاکھ سے زیادہ آبادی ہے کہ جن میں تقریبا آدھے زیدی اور اثنی عشری شیعہ ہیں۔
اسلامی مفکر نے کہا: یمن کی سرحد سعودی عرب سے ملتی ہے یہی چیز باعث بنی ہے کہ گزشتہ کئی سالوں سے سعودی عرب سے وہابی علماء وہاں جا کر وہابیت کی تبلیغ کررہے ہیں۔ وہابیت آج عالم اسلام کی سب سے بڑی مشکل ہے۔
انہوں نے یمن میں اپنے گھر والوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: میرے والد کا گھر یمن میں ابھی بھی وہابیت کی ترویج کا مرکز بنا ہوا ہے اور بہت سارے لوگ اس گھر میں وہابی افکار سے آشنا ہوتے ہیں۔
عماد نے یاد دہانی کرائی کہ میں چھے سال کی عمر میں وہابیت کی کلاس میں حاضر ہونا شروع ہوا تھا اور کچھ ہی سالوں میں وہابیت سے آشنا ہو گیا تھا اور اس بات کی وجہ کہ کیوں وہابی، بچوں کو اپنے افکار سے آشنا کرتے ہیں یہ ہے کہ بچے جلدی باتوں کو قبول کر لیتے ہیں اور ان کے ذہن میں کوئی استدلال اور اعتراض نہیں آتا۔
مجھے خطبہ حضرت زھرا(س) نے شیعہ کیا
ڈاکٹر عماد نے اپنے شیعہ ہونے کے بارے میں بتایا: میں نے سعودی یونیورسٹیوں میں تعلیم مکمل کی آخر میں ایک سنی عالم دین جاھز کی کتاب پر تحقیق کرتے ہوئے جب میں ان کی ایک عبارت پر پہنچا جس سے میرے ذہن میں یہ سوال پیدا ہوا کہ کیوں پیغمبر اسلام (ص) کی رحلت کے بعد مسلمانوں نے رسول(ص) کی بیٹی کی حمایت نہیں کی؟
انہوں نے مزید کہا: حضرت زہرا (س) اپنا حق حاصل کرنے کے لیے حضرت علی (ع) اور امام حسن و حسین (ع) کو لے کر خلیفہ اول کے پاس گئیں لیکن خلیفہ اول نے ان کی گواہی قبول نہیں کی اس سلسلے میں جاھز نے بہت اچھا جواب دیا ہے۔
العماد نے جاھز کےجواب کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: جاھز کا کہنا ہے کہ جب خلیفہ دوم منبر رسول پر بیٹھ کر صحابیوں کے بھرے مجمع میں یہ اعلان کر سکتے ہیں کہ رسول کہتے تھے متعہ حلال ہے اور میں کہتا ہوں حرام ہے اور تمام صحابی مسجد میں بیٹھے خلیفہ دوم کی باتیں سن کر خاموش ہو جاتے ہیں تو ایسے افراد سے کیا توقع کی جا سکتی ہے کہ وہ بنت رسول(ص) کا حق غصب نہ کریں اور انہیں واپس لوٹا دیں۔
انہوں نے امام فخر الدین رازی کے کچھ جملوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: جب میں وہابی تھا یہ سوچتا تھا کہ یہ جو حضرت زہرا(س) نے کہا کہ میرے جنازے میں یہ دو لوگ شریک نہ ہوں تو اس میں قصور حضرت زہرا(س) کا تھا نہ کہ خلیفہ اول و دوم کا لیکن جب میں نے تحقیق کی تو اس کے برخلاف معلوم ہوا۔ میں اسی مسئلے کی تحقیق کر رہا تھا کہ امام فخر الدین رازی کی اس عبارت تک پہنچا جو میرے لیے بہت دلچسپ تھے ان کو پڑھ کر میں مطمئن ہو گیا کہ حضرت زہرا(س) حق پر تھیں، وہ عبارت یہ تھی: ’’قرآن کریم میں موجودہ ارث سے متعلق آیات اور رسول سے مروی احادیث میں وراثت چھوڑنے پر تاکید کی گئی ہے تو کیسے ممکن ہے کہ رسول اسلام(ص) خود فدک دوسروں کو بخش دیں اور اپنی بیٹی کو وراثت میں نہ دیں؟‘‘
حضرت زھرا(س) پر پڑے مصائب کو بیان کرنا میرا فریضہ ہے
عصام العماد نے مزید کہا: ایک مرتبہ ایک صحابی، رسول کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا کہ میں نے اپنا سارا مال راہ خدا میں وقف کر دیا ہے تو رسول ناراض ہو گئے اور کہا کہ تم صرف ایک تہائی حصے کو وقف کرنے کا حق رکھتے ہو ، اب کیسے ممکن ہے خود رسول اپنے بعد سارا مال بخش دیں اور اپنی اولاد کو کچھ نہ دیں؟
انہوں نے کہا کہ میں فخرالدین رازی کی یہ عبارت پڑھ کر حیران رہ گیا حضرت زھرا (س) کی مظلومیت کا احساس کیا۔ حضرت زھرا(س) کی مظلومیت میرے شیعہ ہونے کا باعث بنی اور میں نے اس چیز کو ایک مقالے’’ میرے شیعہ ہونے میں حضرت زھرا(س) کی مظلومیت کا کرار‘‘ کے عنوان سے بیان کیا ہے۔
عصام العماد نے کہا: اس کے بعد میں نے ایک سنی عالم دین کی لکھی ہوئی کتاب کا مطالعہ کیا جو انہوں نے شیعہ ہونے کے بعد لکھی تھی اور اس کا نام تھا ’’ بنور فاطمہ سلام اللہ علیہا اھتدیت‘‘ ( میں نے نور فاطمہ کے ذریعے ہدایت پائی) اس کتاب میں، میں حضرت زھرا (س) کے خطبے کو پڑھ کر شیعہ ہو گیا۔
انہوں نے مزید کہا: وہابیوں کے لیے بہت سخت ہے کہ وہ اس بات کو قبول کریں کہ حضرت زھرا (س) حق بجانب تھیں چونکہ اس بات سے خود ان پر اعتراض ہوتا ہے۔ اس وجہ سے میں نے یہ ٹھال لی ہے کہ شیعت کی حقانیت کو ثابت کرنے کے لیے خلیفہ اول و دوم کی طرف سے حضرت زہرا سلام اللہ علیہا پر ڈھائے گئے مظالم کو بیان کروں۔
واضح رہے کہ ڈاکٹر عصام العماد ایک وہابی عالم دین تھے جنہوں نے شیعہ مذہب کا مطالعہ کرنے کے بعد مذہب حقہ کو قبول کیا انہوں نے شیعہ ہونے سے پہلے ۱۷ سال ایک سنی سعودی عرب کی وہابی یونیورسٹی میں عالم حاصل کیا اور اس دوران شیعہ مذہب اور امام علی (ع) کے خلاف کتاب لکھی اور شیعہ ہونے کے بعد اپنی اس پہلی کتاب پر جواب لکھا۔
قابل ذکر ہے کہ ڈاکٹر العماد شیعہ ہونے کے بعد قم میں تعلیم و تدریس میں مشغول ہیں انہوں نے شیعہ شناسی، علم رجال اور حدیث و تاریخ میں مہارت حاصل کی۔ موصوف اس وقت جامعۃ المصطفیّٰ(ع) العالمیہ میں استاد کے عنوان سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔
عصام العماد چونکہ ایک طویل عرصے تک وہابی فرقے کے عالم دین تھے اور اس فرقے کی اصلیت سے بخوبی آشنا ہیں اس وجہ سے اب وہابیت کی حقیقت کو ظاہر کرنے میں کتابیں تالیف کر رہے ہیں۔
موصوف نے اپنے خاندان میں تبلیغ کے ذریعے پانچ افراد یعنی اپنے بھائی حسن العماد، تین بہنیں اور ایک بھانجے طہٰ الذاری کو شیعہ کر دیا ہے جو قم میں زیر تعلیم ہیں۔

LikeShow more reactions

Comment

Syria: Iran’s missile killed at least 50 Daesh terrorists  including several high-ranking commanders, were killed when one of Iran’s missiles hit their headquarters in Syria’s Dayr al-Zawr. Iran’s Islamic Revolution Guards Corps (IRGC) fired six medium-range ground-to-ground ballistic missiles at Daesh bases in Syria’s Dayr al-Zawr on Sunday in retaliation for twin terrorist attacks in the Iranian capital Tehran, which killed 17 people and injured over 50 others. According to reports, one of the missiles directly hit a Daesh command center in the city of al-Mayadin in Dayr al-Zawr. Six Libyan Daesh commanders were killed in the attack; two of whom have been identified as Abu Asim al-Libyai and Abdel Kader al-frani.

ALHAMDOLILLAH , SHUKR ALLAH , Daesh are being sent to hell every now  and  then, the process is slow but steady , primerly because of the caution on civilian population , other wise after the sure demise, however undeclared , of the KHALEEFA ABU BAKAR (sic) it was a matter of just only a few days .
However Evil never lasts for ever and soon there  will remain no one to call himself a DAESHI and they shall all be found only in the books of history . Let us all the peace loving people of the world or in other words the
true Muslims , the followers of  Ahlebayt e Rasool (s) pray for that grand Eid come sooner than later.

13 TH OF RAJAB AL MARAJJAB THE ONLY PERSON EVER BORN IN THE HOLY  PRECINCT OF KAABAH, THAT TOO WHEN THE MAIN DOOR WAS LOCKED AND THE MOTHER OF AMEERAL MOMENEEN ALI IBNE ABI TALIB , THE WIFE OF THE SAVIOUR OF ISLAM, THE PROTECTOR OF RASOOL E ISLAM AND THE CARETAKER OF THE HOLY BUILDING KNOWN AS THE HOUSE OF ALLAH ,BUILT BY THEIR ELDERS NABI HAZRAT IBRAHEEM (a s) HAZRAT ISMAEIL (a s) .SHE IS STANDING, THE MAIN DOOR IS LOCKED ,A SPLIT APPEARS IN THE WALL AND SHE IS DIVINELY COMMANDED TO GET IN AND DELIVER THE ALLAH’S GIFT SHE HAS BEEN SO CAREFULLY CARRYING FOR NINE MONTHS . 

THE BLESSED INFANT APPEARS , STAYS IN THE HOUSE OF ALLAH FOR THREE DAYS AND THE SPLIT REOPENS WHEN RASOOL E KAREEM (saw)IS AWAITING OUTSIDE TO WELCOME THE NEW BORN , WHO DO NOT OPEN HIS EYES AS YET TILL THE RASOOL E KAREEM (saawaws) LFTS HIM UP IN HIS ARMS & THEN HE OPENS HIS EYES ON THE FACE OF THE  RASOOL(s) MAQBOOL (saawaws) THE RASOOL RECITES AZAAN IN HIS RIGHT EARS AND AQAMAH IN HIS LEFT EARS AND HANDS OVER TO HIS MOTHER , CONGRATULATES HIS UNCLE FOR THE BLESSED BORN ..
 
Mil’ad al Amir al Mumineen Ali ibn Abi Talib Mubarak 
 
Allah has granted an opportunity to His creation on the chosen night of 13th of Rajab al Asab to change their Taqdeer (destiny); yes, through Istaghf’ar and Ibadah this is possible on this blessed night in which Allah changed the Taqdeer of the Universe through the birth of Ali inside the Kabah and no one shall get this honour till the Qayamah.
Take Ghusul on this night and after Salaat al Esha offer Salaat Tasbeeh al Azam which is also known as Salaat Jafar al Tayyar and then pray two Rakaat Salaat al Tawassul on the Niyah of Amir al Mumineen Ali (as). Then do the following Tasbeeh 1000 times: 
“Astaghfirullaha Zal Jalale wal Ikraam Min Jami’iz Zunube wal Aath’am”
Salawaat 110 times
If sins can be forgiven, then the obstacles of the world can also be removed. Do not waste this night in Khuraf’at but spend it in Ibadah till the completion of Salaat al Fajr. As you present gifts to your beloved ones, present a gift to Moula Amir al Mumineen, Ali Ibn Abi Talib, who doesn’t need your money like people of the world. Present him a promise with full determination and Khuzu to shun one of your bad habits or sins forever. He will happy to receive your gift and at that time ask him to help you through the power that Allah has exclusively granted him. 
 
At the time of Dua do not forgive your beloved ones who left this world and have joined the eternal world. Take their names and say “Allahhumma Aghfir” – (May Allah forgive him/her) and Rahmah of Allah will shower on them and in return they will happily send their Dua to you, which will help you in your affairs, Insha Allah. Do Sadaqah – charity on this joyous night and day and get Afzal reward. 
 
Posted by: “Qazi Dr. Shaikh Abbas Borhany” 
 
 
 
 
A  Hindu ka Mola Ki Shan Main Qasidah
QORAN & SUNNAH OR QORA’AN & AHLEBAYT ?. 
FIRST THERE IS JUST ONE HADEES QORA’AN & SUNNAH WHICH IS WEAK AND UNRELIABLE 
QORA’AN AND AHLEBAYT IS MOST MOTWATIR & AUTHENTIC, MOST AHLE SUNNAH SHIA HAVE ACCEPTED IT SAHEEH.
OLLLIL AMR  IS  IMAM FROM AHLE BAYT , THERE IS NO NEED TO REFER TO ANY  FOR IMAM FROM AHLEBAYT ARE IMMACULATE & INFALLIABLE , THEY  CANT EVER GO WRONG .
 
ACTUAL.LY BELEIVERS HAVE TO FOLLOW ONLY THE COMMANDS FROM THEM . SUNNAH IS MISNOMER , IT IS ABSURD, YOU CAN’T DO ALL WHAT THE HOLY NABI DID , NOT ONLY THE ORDINARY MAN HAS NOT THAT CAPACITY , MANY THINGS WERE FOR NABI’S ONLY . EVEN MANY PRAYERS WERE FOR HIM ONLY WHILE  SOME WERE MADE MANDATORY FOR COMMON MAN, ONLY THAT HAS TO BE PERFORMED BY PEOPLE LIKE ALL OF US .. 
 
WHILE IT IS WRONG THAT THE HOLY PROPHET HAD IN HIS NIKAH A 6 YRS OLD AYESHA CONSUMMATED AT 9 . DO ALL SUNNIS DO THIS SUNNAH , IF NOT , WHY , THEN HOW THEY ARE SUNNI . THE FACT IS SAHEE BOKHARI IS FULL OF LIES, MORE PORN THAN SAHEEH. LADY AYESHA WAS PERFECT 20 OR 21 AND ALREADY BETHROTED TO JUBAYR IBNE MUTEEM WHILE THE RASOOL(saawaws) IN HIS EXTREME COMPASSION OBLIDGED ABU BAKR WHO WAS WORRIED WHO SHALL NOW MARRY HER AFTER JUBAYR LEFT HER .  

SUNNAH OF RASOOL IS 12 NIKAH , DO SUNNIS FULFIL ALL THESE DOZEN , THE FACT  IS THEY ARE ALLOWED MAXIMUM 4 THEN HOW DO YOU FULFIL THE REST OF SUNNAH , SO YOU CAN’T, SO YOU CAN’T BE A PARFECT. SUNNI. THAT MEANS SUNNISM IS NOTHING BUT A FRAUD, THE SOONER YOU LEAVE IT , THE BETTER IT IS FOR YOUR AAQEBAT. 
 
DO MUSLIM DO SUNNAH OF RASOOL WHILE DOING MISYAR , URFI, DID RASOOL EVER DID IT OR HE ALLOWED ANY OF THE SAHABAH TO DO IT .THEN HOW YOU SUNNI -WAHABIS DO IT . IS IT NOT YOUR DIRTY INNOVATION?  YOU HAVE MADE SUNNAH A MAZAQ,A FUNNY TAMASKHAR. ITS FOUR  FIQH,OF ONE SINGLE DEEN , THAT TOO WHICH WAS WRITTEN  200 YEARS LATER , RECORDED  AFTER RASOOL’S DEMISE , BASED ON FADING , FAILING MEMORIES AND LOT OF MISREPORTING AND PLENTY OF INNOVATIONS  WHAT WILL BE THE FATE OF SUCH DIVERSIFIED CULT OF ONE ORIGINAL DEEN SPLITTED BY FOUR IMAM THEN WAHABIS CAME OUT OF IT AND DIVIDED INTO SEVENTY TWO .  NATURALLY , CHIOS , REBELLIAN , FRUSTRATION, CONFLICTS AND TERRORISM .  IT  IS EXPLOITATION, IT IS IN KASRAT, AND IT IS HARAAM WHETHER YOU LIKE TO HEAR IT OR NOT , IT IS SI,PLY A FRAUD ON HUMANITY AND IT WAS GIVEN ITS NAME, NONE BUT ABU SUFIYAN’S SON MOAVIAH , WHO KILLED THE GRANDSON OF NABI, ONE OF THE WIFE OF NABI AND A FAVORITE SAHABI BESIDES KILLING THOUSANDS OF NEO MUSLIMS, WAGING WAR ON KHALIFA E WAQT AND RAISING PAGES OF HOLY QOR-A’AN ON SPEARS AND WHOSE SON YAZEED USED TO SAY RASOOL , QORA’AN, REVELATIONS WERE ALL HIS FRAUDS (ma’az Allah) TO RULE ON QORAISH AND  AFTER KILLING WHOEVER WERE LEFT IN THE PROGENY SAVE ONLY A FEW, HE USED TO BOAST TO THE FAMILY ” SEE HOW I TOOK REVENGE OF THE KILLING OF MY FOREFATHERS IN BADR O OHUD. AND FOR SOME SUNNIES, HE IS THE RAZI ALLAH ANHO OF ISLAM. 
 
SO THEN, COME TO THE TRUE ISLAM, THE ASL ISLAM, SHIA ISLAM PROPAGATED BY RASOOL (s) AND HIS IMMEDIATE PROGENY, THE ITRAH, THE AHLEBAYT(a), WHO ARE THE FLESH AND BLOOD  OF THE HOLY PROPHET (s) , WHO CANNOT GO WRONG AND  WHOSE OBEDIANCE HAS BEEN MADE MANDATORY FOR EVERY BELIEVER . ” OBEY ALLAH, OBEY RASOOL & OBEY HIS OLIL AMR (FROM HIS PROGENY) ”MINKUM (from among us).